100+ Love Poetry in Urdu SMS – Urdu Mohabbat Shayari

100+ Love Poetry in Urdu SMS – Urdu Mohabbat Shayari

love poetry in Urdu SMS has been provided here. Most friends look for text poetry for sms on mobile because everyone likes loving poetry. Therefore, we have mentioned here the poets of different Urdu poets who are all Urdu poetry and also mentioned the friends who do not understand Urdu in Roman Urdu. So you can easily copy and paste the following poems and share with your friends.

Love Poetry in Urdu SMS in Text

 Love Poetry in Urdu SMS

کون کہتا ہے محبت کی زباں ہوتی ہے

یہ حقیقت تو نگاہوں سے بیاں ہوتی ہے

kon kehta hai mohabbat ki zuba hoti hai
yeh haqeeqat to nigahon se bayan hoti hai

 

وہ نہ آئے تو ستاتی ہے خلش سی دل کو

وہ جو آئے تو خلش اورجواں ہوتی ہے

woh nah aaye to satati hai khalish si dil ko
woh jo aaye to khalish اورجواں hoti hai

 

روح کو شاد کرے دل کو جو پُر نور کرے

ہر نظارے میں یہ تنویر کہاں ہوتی ہے

rooh ko shaad kere dil ko jo pur noor kere
har nazare mein yeh Tanveer kahan hoti hai

 

ضبطِ سیلابِ محبت کو کہاں تک روکے

دل میں جو بات ہو آنکھوں سے عیاں ہوتی ہے

zbtِ selaab mohabbat ko kahan tak rokay
dil mein jo baat ho aankhon se ayaan hoti hai

 

زندگی اک سلگتی سی چِتا ہے ساحرؔ

شعلہ بنتی ہے نہ یہ بجھ کے دھواں ہوتی ہے

zindagi ik sulagti si chitaa hai ساحرؔ
shola banti hai nah yeh bujh ke dhuwan hoti hai

 

وہ کیوں نہ روٹھتا میں نے بھی تو خطا کی تھی

بہت خیال رکھا تھا بہت وفا کی تھی

woh kyun nah rothta mein ne bhi to khata ki thi
bohat khayaal rakha tha bohat wafa ki thi

 

تکلیف مٹ گئی مگر احساس رہ گیا

خوش ہوں کہ کچھ نہ کچھ تو میرے پاس رہ گیا

takleef mit gayi magar ehsas reh gaya
khush hon ke kuch nah kuch to mere paas reh gay

وہ دیکھنے مجھے آنا تو چاہتا ہوگا

مگر زمانے کی باتوں سے ڈر گیا ہوگا

woh dekhnay mujhe aana to chahta hoga
magar zamane ki baton se dar gaya hoga

 

اسے تھا شوق بہت مجھ کو اچھا رکھنے کا

یہ شوق اوروں کو شاید برا لگا ہوگا

usay tha shoq bohat mujh ko acha rakhnay ka
yeh shoq ouron ko shayad bura laga hoga

 

کبھی نہ حد ادب سے بڑھے تھے دیدہ و دل

وہ مجھ سے کس لیے کسی بات پر خفا ہوگا

kabhi nah had adab se barhay thay deedaa o dil
woh mujh se kis liye kisi baat par khafa hoga

 

مجھے گمان ہے یہ بھی یقین کی حد تک

کسی سے بھی نہ وہ میری طرح ملا ہوگا

mujhe gumaan hai yeh bhi yaqeen ki had tak
kisi se bhi nah woh meri terhan mila hoga

 

کبھی کبھی تو ستاروں کی چھاؤں میں وہ بھی

مرے خیال میں کچھ دیر جاگتا ہوگا

kabhi kabhi to sitaron ki chaon mein woh bhi
marey khayaal mein kuch der jaagta hoga

 

وہ اس کا سادہ و معصوم والہانہ پن

کسی بھی جگ میں کوئی دیوتا بھی کیا ہوگا

woh is ka saada o masoom walehana pan
kisi bhi jug mein koi daiwata bhi kya hoga

 

نہیں وہ آیا تو جالبؔ گلہ نہ کر اس کا

نہ جانے کیا اسے درپیش مسئلہ ہوگا

nahi woh aaya to جالبؔ gilah nah kar is ka
nah jane kya usay darpaish masla hoga

 

 

مگر اچھا تو یہ ہوتا کہ ہم اک ساتھ رہتے

بھری رہتی تیرے کپڑوں سے الماری ہماری

 

magar acha to yeh hota ke hum ik sath rehtay

bhari rehti tairay kapron se almaari hamari

 

اتنا لٹے ہیں مہر و مروت کی آڑ میں

ہم سے کسی نے ہاتھ ملایا تو ڈر گئے

 

itna lutte hain mohar o murawwat ki aarr mein

hum se kisi ne haath milaya to dar gaye

 

میں اسے بھول کے بھی یاد نہیں آ سکتی

جو مجھے باندھ گیا درد کی زنجیر کے ساتھ

mein usay bhool ke bhi yaad nahi aa sakti

jo mujhe bandh gaya dard ki zanjeer ke sath

 

چہرے بدل بدل کے مجھے مل رہے ہیں لوگ

اتنا بُرا سلوک میری سادگی کے ساتھ؟

chehray badal badal ke mujhe mil rahay hain log

itna boُra sulooq meri saadgi ke sath ?

 

کی نظر میں نے جب احساس کے آئینے میں

اپنا دل پایا دھڑکتا ہوا ہر سینے میں

ki nazar mein ne jab ehsas ke aaiine mein

apna dil paaya dhadakataa sun-hwa har seenay mein

 

مدتیں گزریں ملاقات ہوئی تھی تم سے

پھر کوئی اور نہ آیا نظر آئینے میں

muddatein guzren mulaqaat hui thi tum se

phir koi aur nah aaya nazar aaiine mein

 

اپنے کاندھوں پہ لیے پھرتا ہوں اپنی ہی صلیب

خود مری موت کا ماتم ہے مرے جینے میں

 

–apne kandhon pay liye phirta hon apni hi saleeb

khud meri mout ka maatam hai marey jeeney mein

 

اپنے انداز سے اندازہ لگایا سب نے

مجھ کو یاروں نے غلط کر لیا تخمینے میں

 

–apne andaaz se andaza lagaya sab ne

mujh ko yaaron ne ghalat kar liya takhminay mein

 

اپنی جانب نہیں اب لوٹنا ممکن میرا

ڈھل گیا ہوں میں سراپا ترے آئینے میں

apni janib nahi ab lootna mumkin mera

dhal gaya hon mein saraapaa tre aaiine mein

 

 

ایک لمحے کو ہی آ جائے میسر کیفیؔ

وہ نظر جو مجھے دیکھے مرے آئینے میں

aik lamhay ko hi aa jaye muyassar کیفیؔ

woh nazar jo mujhe dekhe marey aaiine mein

 

ہمارے پاس بتانے کو کچھ نہیں باقی

ہمارے ساتھ جو ہونا تھا ہو گیا آخر

hamaray paas bitanay ko kuch nahi baqi

hamaray sath jo hona tha ho gaya aakhir

 

ہنسو ہنسو کہ تمہارے تو خیر لاکھوں ہیں

ہمارا ایک تھا ! وہ بھی ہے کھُو گیا آخر

 

hanso hanso ke tumahray to kher lakhoon hain

hamara aik tha! woh bhi hai Kho gaya aakhir

 

 

باندھ دو کوئی کالا دھاگا نظر الف کا

بے پناہ عشق کرتے ہیں آپ سے کہیں نظر نہ لگ جائے

 

bandh do koi kala dhaga nazar alif ka

be panah ishhq karte hain aap se kahin nazar nah lag jaye

 

‏وفاوں سے مکر جانا ہمیں آیا نہیں اب تک

جو واقف نہ ہو چاہت سے ہم ان سے ضد نہیں کرتے

 

وفاوں se makr jana hamein aaya nahi ab tak

jo waaqif nah ho chahat se hum un se zid nahi karte

 

اُس کو غُصّہ تھا کِسی اور کا جو اُتارا مُجھ پر

اُس کو چھوڑا تھا کِسی نے وہ مُجھے چھوڑ گیا!

 

uss ko gussa tha kisi aur ka jo utaara mujh par

uss ko chorra tha kisi ne woh mujhe chore gaya !

 

تم اگر چاہو تو تجدید۔ محبت کے لیے

ایک ہلکا سا تبسم ، ایک انگڑائی بہت

tum agar chaho to tajdeed. mohabbat ke liye

aik halka sa tabassum, aik angrai bohat

 

کوئی زنجیر پھر واپس وہیں پر لے کے آتی ہے

کٹھن ہو راہ تو چھٹتا ہے گھر آہستہ آہستہ

koi zanjeer phir wapas wahein par le ke aati hai

kathin ho raah to چھٹتا hai ghar aahista aahist

 

بدل دینا ہے رستہ یا کہیں پر بیٹھ جانا ہے

کہ تھکتا جا رہا ہے ہم سفر آہستہ آہستہ

badal dena hai rasta ya kahin par baith jana hai

ke thakta ja raha hai hum safar aahista aahista

 

خلش کے ساتھ اس دل سے نہ میری جاں نکل جائے

کھنچے تیر شناسائی مگر آہستہ آہستہ

khalish ke sath is dil se nah meri jaan nikal jaye

khnche teer shanasaai magar aahista aahista

 

ہوا سے سرکشی میں پھول کا اپنا زیاں دیکھا

سو جھکتا جا رہا ہے اب یہ سر آہستہ آہستہ

sun-hwa se sar kashi mein phool ka apna zayan dekha

so jhukta ja raha hai ab yeh sir aahista aahista

 

مری شعلہ مزاجی کو وہ جنگل کیسے راس آئے

ہوا بھی سانس لیتی ہو جدھر آہستہ آہستہ

meri shola mizaji ko woh jungle kaisay raas aaye

sun-hwa bhi saans layte ho jidhar aahista aahista

 

مرے ہم نفس، مرے ہم نوا،مجھے دوست بن کے دغا نہ دے

میں ہوں دردِ عشق سے جاں بلب،مجھے زندگی کی دُعا نہ دے۔۔

marey hum nafs, marey hum nawa, mujhe dost ban ke dagha nah day
mein hon drdِ ishhq se jaan bulb, mujhe zindagi ki dُaa nah day. .

 

میں غمِ جہاں سے نڈھال ہوں، کہ سراپا حزن و ملال ہوں

جو لکھے ہیں میرے نصیب میں، وہ الم کسی کو خُدا نہ دے۔۔

mein gham e jahan se nidhaal hon, ke saraapaa Hazan o malaal hon
jo likhay hain mere naseeb mein, woh alum kisi ko khuda nah day. .

 

نہ یہ زندگی مری زندگی، نہ یہ داستاں مری داستاں

میں خیال و وہم سے دور ہوں، مجھے آج کوئی صدا نہ دے۔۔

nah yeh zindagi meri zindagi, nah yeh dastan meri dastan
mein khayaal o vahm se daur hon, mujhe aaj koi sada nah day. .

 

مرے گھر سے دور ہیں راحتیں، مجھے ڈھونڈتی ہیں مصیبتیں

مجھ خوف یہ کہ مرا پتہ، کوئی گردشوں کو بتا نہ دے۔۔

marey ghar se daur hain rahtin, mujhe dhoondti hain museebatein
mujh khauf yeh ke mra pata, koi gardishon ko bta nah day. .

 

مجھے چھوڑ دے مرے حال پر، ترا کیا بھروسہ اے چارہ گر

یہ تری نوازشِ مختصر ، مرا درد اور بڑھا نہ دے۔۔

mujhe chore day marey haal par, tra kya bharosa ae charah gir
yeh tri Nawazish mukhtasir, mra dard aur barha nah day. .

 

مرا عزم اتنا بلند ہے کہ، پرائے شعلوں کا ڈر نہیں

مجھے خوف آتشِ گُل سے ہے، کہیں یہ چمن کو جلا نہ دے۔۔

mra azm itna buland hai ke, paraye shulon ka dar nahi
mujhe khauf aatish gُl se hai, kahin yeh chaman ko jala nah day. .

 

درِ یار پہ بڑی دھوم ہے ،وہی عاشقوں کا ہجوم ہے

ابھی نیند آئی ہے حُسن کو کوئی شور کر کے جگا نہ دے۔۔

dar-e yaar pay barri dhoom hai, wohi aashiqon ka hajhoom hai
abhi neend aayi hai husn ko koi shore kar ke jaga nah day. .

 

مرے داغِ دل سے ہے روشنی، یہی روشنی ہے مری زندگی

مجھے ڈر ہے اے مرے چارہ گر، یہ چراغ تُو ہی بُجھا نہ دے۔۔

marey Daagh dil se hai roshni, yahi roshni hai meri zindagi
mujhe dar hai ae marey charah gir, yeh chairag too hi bhuja nah day. .

 

وہ اُٹھے ہیں لے کے خم و سبو، ارے اے شکیل کہاں ہے تُو

ترا جام لینے کو بزم میں ، کوئی اور ہاتھ بڑھا نہ دے۔۔

woh uthay hain le ke khham o subu, arrey ae shakeel kahan hai too
tra jaam lainay ko bazm mein, koi aur haath barha nah day. .

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *