Firaq Gorakhpuri Poetry ,Shayari , Ghazals- Pashtourdu

Firaq Gorakhpuri Poetry , Ghazals, Poems- Pashtourdu

You can Read Faraq Gorakhpuri Poetry Scroll Down. Faraq Gorakhpuri was originally named Raghupati Sahai. He was born on August 28, 1896 and died on March 3, 1982. He is known by his pen name Faraq Gorakhpuri, one of the most famous contemporary Urdu poets in India Was one of He established himself among the comrades including Muhammad Iqbal, Yegana Chingizi, Jaggar Muradabadi and Josh Malihabadi. In the field of poetry, poets had a well-known status. One of your works is Gul Naghma، Gul Raana, Mashaal, Reeh e Kayenat, sargam etc. If anyone wants to Read to the Firaq Gorakhpuri Poetry of this famous poet, then we have collected some ghazals and the best poetry and mentioned them below. 

Firaq Gorakhpuri

” Firaq Gorakhpuri Poetry “

جو ان معصوم آنکھوں نے دیے تھے

وہ دھوکے آج تک میں کھا رہا ہوں

jo un masoom aankhon ne diye thay
woh dhokay aaj tak mein kha raha hon

ستاروں سے الجھتا جا رہا ہوں

شب فرقت بہت گھبرا رہا ہوں

sitaron se ulajhta ja raha hon
shab furqat bohat ghabra raha hon

ترے غم کو بھی کچھ بہلا رہا ہوں

جہاں کو بھی سمجھتا جا رہا ہوں

tre gham ko bhi kuch behla raha hon
jahan ko bhi samjhta ja raha hon

یقیں یہ ہے حقیقت کھل رہی ہے

گماں یہ ہے کہ دھوکے کھا رہا ہوں

yaqeen yeh hai haqeeqat khil rahi hai
guma yeh hai ke dhokay kha raha hon

اگر ممکن ہو لے لے اپنی آہٹ

خبر دو حسن کو میں آ رہا ہوں

agar mumkin ho le le apni aahat
khabar do husn ko mein aa raha hon

حدیں حسن و محبت کی ملا کر

قیامت پر قیامت ڈھا رہا ہوں

hade husn o mohabbat ki mila kar
qayamat par qayamat dhaa raha hon

خبر ہے تجھ کو اے ضبط محبت

ترے ہاتھوں میں لٹتا جا رہا ہوں

khabar hai tujh ko ae zabt mohabbat
tre hathon mein لٹتا ja raha hon

اثر بھی لے رہا ہوں تیری چپ کا

تجھے قائل بھی کرتا جا رہا ہوں

assar bhi le raha hon teri chup ka
tujhe qaail bhi karta ja raha hon

بھرم تیرے ستم کا کھل چکا ہے

میں تجھ سے آج کیوں شرما رہا ہوں

bharam tairay sitam ka khil chuka hai
mein tujh se aaj kyun sharmaa raha hon

انہیں میں راز ہیں گلباریوں کے

میں جو چنگاریاں برسا رہا ہوں

inhen mein raaz hain gulbahario ke
mein jo chingariyan barsa raha hon

جو ان معصوم آنکھوں نے دیے تھے

وہ دھوکے آج تک میں کھا رہا ہوں

jo un masoom aankhon ne diye thay
woh dhokay aaj tak mein kha raha hon

ترے پہلو میں کیوں ہوتا ہے محسوس

کہ تجھ سے دور ہوتا جا رہا ہوں

tre pehlu mein kyun hota hai mehsoos
ke tujh se daur hota ja raha hon

حد‌‌ جود و کرم سے بڑھ چلا حسن

نگاہ یار کو یاد آ رہا ہوں

Jaod wa‌ o karam se barh chala husn
nigah yaar ko yaad aa raha hon

جو الجھی تھی کبھی آدم کے ہاتھوں

وہ گتھی آج تک سلجھا رہا ہوں

jo uljhi thi kabhi aadam ke hathon
woh guthi aaj tak suljha raha hon

محبت اب محبت ہو چلی ہے

تجھے کچھ بھولتا سا جا رہا ہوں

mohabbat ab mohabbat ho chali hai
tujhe kuch bhoolta sa ja raha hon

اجل بھی جن کو سن کر جھومتی ہے

وہ نغمے زندگی کے گا رہا ہوں

ajal bhi jin ko sun kar jhoomti hai
woh naghmay zindagi ke ga raha hon

یہ سناٹا ہے میرے پاؤں کی چاپ

فراقؔ اپنی کچھ آہٹ پا رہا ہوں

yeh sannata hai mere paon ki chaap

firaqؔ apni kuch aahat pa raha hon

——————-Ghazal——————

 

تم جس بات پہ ہنستے ھو، میں رو پڑتا ھوں

میں جس بات پہ روتا ھوں، تم ہنس دیتے ھو

tum jis baat pay hanstay ho, mein ro parta hoon
mein jis baat pay rota hoon, tum hans dete ho

 

 

میں جس بات پہ بجھ جاؤں ،تم کھل جاتے ھو

میں جس بات پہ مرتا ھوں، تم جی اٹھتے ھو

mein jis baat pay bujh jaoon, tum khil jatay ho
mein jis baat pay mrta hoon, tum jee uthte ho

 

 

میں جس بات پہ درد میں ڈوبا رہتا ھوں

تم اس بات پہ روشن روشن لگتے ھو

mein jis baat pay dard mein dooba rehta hoon
tum is baat pay roshan roshan lagtay ho

 

 

سوچ رہا ھوں کتنے زیادہ الگ الگ ھیں،

تیری میری سوچ کے دھارے،

soch raha hoon kitney ziyada allag allag hain ,
teri meri soch ke dhaaray ,

 

 

کتنے زیادہ جدا جدا ھیں،

سوچ رہا ھوں

،اتنے مخالف طوفانوں کو سہیں گے کیسے

تم اور میں اک چھت کے نیچے رہیں گے کیسے

kitney ziyada judda judda hain,

soch raha hoon
, itnay mukhalif tufanoon ko sahen ge kaisay
tum aur mein ik chhat ke neechay rahen ge kaisay

, , ,

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *