Ghani Khan Poetry | Pashto Lovely Poetry by Ghani baba

Ghani Khan Poetry | Pashto Lovely Poetry by Ghani baba

Ghani Khan poetry is famous all over the world, but the Pashtun community gives a special place to Ghani Khan’s beloved Pashto Lovely poetry. Because there have been many great Pashto poets like Rehman Baba, Sardar Ali Takar, Khushal Khan Baba, etc. But ghani khan ghazal is very popular among the people. And the reason for Ghani Khan Baba’s fame in Pashto poetry is that his poems have been proven by experience. That is why Pashto poetry is loved by people all over the world and translated into their own languages. So below we have prepared for you many lovely Pashto poetry by Ghani Khan Baba.

 

==================== Ghani Khan Ghazal ==================

غرمہ دہ اوڑی لکہ شپہ دہ جمی
یو خاموشی یو قلارے خور دے

زوڑندی پانڑی ونی غلے ودی مرغئ
وخت خپہ نیولے پہ رکاب سور دے

دنیا دے خپل زڑگی تہ غوگ نیولے
دہ مرگ او جوند حساب کتاب اوری

فضاء کی گڈ یو مسکی توب شانتی
لکہ پہ خوب کی سوک رباب اوری

آؤ زہ یوا زے پہ خیالونوں کی ڈوب
دہ خپل ارمان تلاش کی گرزمہ

یو ورک مجبورہ مسافر یم ربہ
پہ زمکہ پروت پہ آسمان گرزمہ

ما دے ہم خپل زڑگی تہ غوگ نیولے
دہ جوند سہ وجہ سہ نصاب لٹہ ؤم

درد لہ او مرگ لہ سہ ثواب گورمہ
ابد کی خپل د ہوش خباب لٹہ وم

چھپا چھپیا آؤ خاموشئ کی زہ
شرنگ دہ ستار دہ تار مضمون گورمہ

چاپیرہ رنگ کی شنہ کونتروں کی زہ
زانلہ جواب دہ خپل جوندون گورمہ

زہ لیونے یم لیونے پہ ریختیا
پہ میخانے کی افلاطون گورمہ

زہ لیونے یم لیونے پہ ریختیا
د مرگ پہ سترگوں کی جوندون گورمہ

 

==================== Ghani Khan Shairi ==================

ماته د جنت کیسې
ځان ته د دنیا حساب

 

دا دی عجیبه انصاف
دا دی عجیبه کتاب

 

زه په مستي سور کافر
ته په هوس سپین ملا

 

ماته په فتوا عذاب
تاته په دوکه ثـواب

 

ی د عدالت ربه
دا لوبه خو ورانه که

 

مونږه انسانانو ته
نوې لار ودانه که

 

نور که څه کوې کنه
خلاص مو د ملا نه که

 

نور که څه کوې کنه
خلاص مو د ملا نه که

 

==================== Da Ghani Khan Poetry==================

په پختو کے دا متل دے
خپل عمل دا لارے مل دے

 

دا زما خوارہ جونگڑہ 
ما غریب لہ تاج محل دے

 

چے دے نه وینم سوازیگم 
ستا لیدل مے ھم اجل دے

 

زه دا مرگ نہ نه یریگم
مرگ خو ھسے ھم یو زل دے

 

غنی یار سترگو تہ گورم
نن سه بیا بدل بدل دے

———————————————————————————————–

Ghani Khan baba Story

ایک شخص غنی بابا سے ملنے آیا۔ غنی بابا اپنے حجرے میں بیٹھا تھا جب اس بندے نے سلام کیا تو پوچھا کون ہے آپ۔ تو وہ باتیں ایسی تھی کہ

غنی بابا: وعلیکم السلام کون ہیں آپ
شخص: جی میں عالم ہوں
غنی بابا: عالم تو اللہ ہے
شخص: نہیں جی میں امام ہوں (یعنی مسجد میں امام ہوں)
غنی بابا : امام تو چار ہیں آپ پانچویں ہیں؟
شخص: نہیں جی میں مُلا ہوں
غنی بابا: اچھا تو ایسے بولو نا کہ فساد کی جڑ ہو۔

یعنی اس وقت کے مولویوں نے لوگوں کے ساتھ اتنی ناانصافیاں کی تھی کہ غنی بابا جو ایک فراخ او وسیع سوچ و فکر کے مالک تھے نے فساد کی جڑ کا نام دے دیا تھا۔

باقی غنی بابا نے تصوف میں بھی حد کر دی تھی۔ جس کو جاہل مولوی نہ سمجھ سکے اور فتویٰ دیتے رہے۔

اس وقت جب لاوڈ سپیکر نیا نیا آیا تو ان مولویوں نے فتویٰ لگایا تھا اور سڑکوں پر نکلے تھے کہ لاوڈسپیکر کی آواز عورتیں سنیں کی جو حرام ہے۔ آجکل سب سے زیادہ مولوی حضرات ہیں استعمال کرتے ہیں۔
اس وقت سکول کی پڑھائی انگریزوں کی پڑھائی تھی آجکل خود پڑھ رہیں ہیں۔
مطلب یہ ہے کہ صرف شعور آیا ہے اور ہمارے علماء بھی ابھی فرض ٹھیک سے ادا کرتے ہیں۔

تو اگر غنی خان بابا کے اس شعر سے کسی کا دل دکھا ہو تو یہ ان مولویوں کے لئے ہے جو لو گوں کو راہ راست کی بجائے غلط اسلام کی راہ پر کامزن کرنا چاہتے ہیں۔

,

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *