Ghazal in Urdu – Special & Mind Blowing Urdu Ghazal

Ghazal in Urdu – Special & Mind Blowing Urdu Ghazal

We collected ghazal in Urdu of different poets. Which includes poems of famous Urdu language poets. Urdu ghazal is very popular in Pakistan and India. It also has millions of fans in the United States and Europe. So keeping this need in mind, we have compiled a complete list of Urdu ghazals. Some of which we shared on social media got a very good response. So now we have mentioned good Urdu ghazals here too. If you like to read, read on and if you want to copy the text, you can easily copy it to any device. The ghazals below include the ghazals of many poets, some of which are as follows. Mirza ghalib ghazals , poetry of ghalib in urdu, khumar barabankvi, john elia poetry, ahmad faraz poetry, saghar siddiqui  ghazal, mohsin naqvi ghazal, abdul majeed salik, tahzeeb hafi ghazal, sahir lakhnavi, Waqas Sharma Raaz, Altaf Hussain Hali Poetry, salman akhtar poetry.

 

 

Top Ghazal in Urdu with Transliteration

Siraj ul Haq Ijaz

Siraj ul Haq Ijaz Ghazal in Urdu

اپنے دل کو دونوں عالم سے اٹھا سکتا ہوں میں

کیا سمجھتی ہو کہ تم کو بھی بھلا سکتا ہوں میں

apne dil ko dono aalam se utha sakta hon mein
kya samjhti ho ke tum ko bhi bhala sakta hon mein 

 

 

کون تم سے چھین سکتا ہے مجھے کیا وہم ہے

خود زلیخا سے بھی تو دامن بچا سکتا ہوں میں

 kon tum se chean sakta hai mujhe kya vahm hai
khud zulekha se bhi to daman bacha sakta hon mein

 

 

دل میں تم پیدا کرو پہلے مری سی جرأتیں

اور پھر دیکھو کہ تم کو کیا بنا سکتا ہوں میں

 dil mein tum peda karo pehlay meri si juratain
aur phir dekho ke tum ko kya bana sakta hon mein

 

 

دفن کر سکتا ہوں سینے میں تمہارے راز کو

اور تم چاہو تو افسانہ بنا سکتا ہوں میں

 dafan kar sakta hon seenay mein tumahray raaz ko
aur tum chaho to afsana bana sakta hon mein

 

 

میں قسم کھاتا ہوں اپنے نطق کے اعجاز کی

تم کو بزم ماہ و انجم میں بٹھا سکتا ہوں میں

mein qisam khata hon –apne nutq ke Ejaaz ki
tum ko bazm mah o Anjum mein bitha sakta hon mein 

 

 

سر پہ رکھ سکتا ہوں تاج کشور نورانیاں

محفل خورشید کو نیچا دکھا سکتا ہوں میں

 sir pay rakh sakta hon taaj kishwar Noorania
mehfil Khurshid ko neecha dikha sakta hon mein

 

 

میں بہت سرکش ہوں لیکن اک تمہارے واسطے

دل بجھا سکتا ہوں میں آنکھیں بچا سکتا ہوں میں
mein bohat sarkash hon lekin ik tumahray wastay
dil bujha sakta hon mein ankhen bacha sakta hon mein

 

 

تم اگر روٹھو تو اک تم کو منانے کے لئے

گیت گا سکتا ہوں میں آنسو بہا سکتا ہوں میں

 tum agar roothon to ik tum ko mananay ke liye
geet ga sakta hon mein ansoo baha sakta hon mein

 

 

جذب ہے دل میں مرے دونوں جہاں کا سوز و ساز

بربط فطرت کا ہر نغمہ سنا سکتا ہوں میں

jazb hai dil mein marey dono jahan ka soaz o saaz
barbat fitrat ka har naghma suna sakta hon mein

 

 

تم سمجھتی ہو کہ ہیں پردے بہت سے درمیاں

میں یہ کہتا ہوں کہ ہر پردہ اٹھا سکتا ہوں میں

 tum samjhti ho ke hain parday bohat se darmia
mein yeh kehta hon ke har parda utha sakta hon mein

 

 

تم کہ بن سکتی ہو ہر محفل میں فردوس نظر

مجھ کو یہ دعویٰ کہ ہر محفل پہ چھا سکتا ہوں میں

 tum ke ban sakti ho har mehfil mein Firdous nazar
mujh ko yeh daawa ke har mehfil pay chhaa sakta hon mein

 

 

آؤ مل کر انقلاب تازہ تر پیدا کریں

دہر پر اس طرح چھا جائیں کہ سب دیکھا کریں

 aao mil kar inqilab taaza tar peda karen
deher par is terhan chhaa jayen ke sab dekha karen

 

شہزاد احمد Shihzad Ahmad 

شہزاد احمد Shihzad Ahmad  Ghazal In Urdu

سب مزے دُور ہی سے قلب و نظر نے پائے

کیا مُلاقات ہُوئی، بات نہ کرنے پائے

 sab mazay door hi se qalb o nazar ne paye
kya mulaqat hui, baat nah karne paye

 

 

مُجھے دیکھا تو سرِ راہ گُزرتے دیکھا

میری خاطر وہ ذرا بھی نہ ٹھہرنے پائے

 mujhe dekha to sar-e raah guzarte dekha
meri khatir woh zara bhi nah theharnay paye

 

 

آنے والا اگر آیا ۔۔۔۔ مِری جانب آیا

رنگ کیا کیا مِری آہوں کے اثر نے پائے

 anay wala agar aaya. .. . mِri janib aaya
rang kya kya mِri aanhon ke assar ne paye

 

 

شبِ وعدہ ہے تو جی کھول کے باتیں کر لے

اِتنی فُرصت اُسے مَت دے کہ مُکرنے پائے

 shab_e_ wada hai to jee khol ke baatein kar le
itni fursat ussay mat day ke مکرنے paye

 

 

چند لمحوں کے لیے دیکھ لیا تھا اُس کو

مُدّتیں بِیت گئیں، زخم نہ بَھرنے پائے

 chand lamhoon ke liye dekh liya tha uss ko
Muddatein beeet gayeen, zakham nah bharnay paye

 

 

موت بھی آئے تو ہم اپنے ہی سَر لے لیں گے

کوئی اُس شخص پہ اِلزام نہ دَھرنے پائے

mout bhi aaye to hum –apne hi sar le len ge
koi uss shakhs pay ilzaam nah dharnay paye 

 

خمارؔ بارہ بنکوی Khumar BAra

خمارؔ بارہ بنکوی Khumar BAra Ghazal In Urdu

ایک ہی اپنا ملنے والا تھا

ایسا بچھڑا کہ پھر ملا ہی نہیں

 aik hi apna milnay wala tha
aisa bitchrha ke phir mila hi nahi

 

 

ترے در سے اٹھ کر جدھر جاؤں میں

چلوں دو قدم اور ٹھہر جاؤں میں

 tre dar se uth kar jidhar jaoon mein
chaloon do qadam aur thehr jaoon mein

 

 

سنبھالے تو ہوں خود کو تجھ بن مگر

جو چھو لے کوئی تو بکھر جاؤں میں

 sambhale to hon khud ko tujh ban magar
jo chhoo le koi to bikhar jaoon mein

 

 

اگر تو خفا ہو تو پروا نہیں

ترا غم خفا ہو تو مر جاؤں میں

 agar to khafa ho to parwa nahi
tra gham khafa ho to mar jaoon mein

 

 

تبسم نے اتنا ڈسا ہے مجھے

کلی مسکرائے تو ڈر جاؤں میں

 tabassum ne itna dassa hai mujhe
kalie muskuraye to dar jaoon mein

 

 

مرا گھر فسادات میں جل چکا

وطن جاؤں تو کس کے گھر جاؤں میں

 mra ghar fasadaat mein jal chuka
watan jaoon to kis ke ghar jaoon mein

 

 

خمارؔ ان سے ترک تعلق بجا

مگر جیتے جی کیسے مر جاؤں میں

 خمارؔ un se tark talluq baja
magar jeetay jee kaisay mar jaoon mein

 

 

 

عبد المجید سالک  Abdul Majeed Salik  

عبد المجید سالک  Abdul Majeed Salik  

غم کے ہاتھوں مرے دل پر جو سماں گزرا ہے

حادثہ ایسا زمانے میں کہاں گزرا ہے

gham ke hathon marey dil par jo samaa guzra hai
haadsa aisa zamane mein kahan guzra hai

 

 

زندگی کا ہے خلاصہ وہی اک لمحۂ شوق

جو تری یاد میں اے جان جہاں گزرا ہے

zindagi ka hai khulasa wohi ik لمحۂ shoq
jo tri yaad mein ae jaan jahan guzra hai

 

 

حال دل غم سے یہ ہے جیسے کسی صحرا میں

ابھی اک قافلۂ نوحہ گراں گزرا ہے

haal dil gham se yeh hai jaisay kisi sehraa mein
abhi ik qaafla noha giran guzra hai

 

 

بزم دوشیں کو کرو یاد کہ اس کا ہر رند

رونق بار گہ پیر مغاں گزرا ہے

bazm dushain ko karo yaad ke is ka har rind
ronaqe baar gah paiir maghaan guzra hai

 

 

پا بہ گل جو تھے وہ آزردہ نظر آتے ہیں

شاید اس راہ سے وہ سرو رواں گزرا ہے

pa bah Gul jo thay woh aazurda nazar atay hain
shayad is raah se woh saro rawan guzra hai

 

 

نگرانیٔ دل و دیدہ ہوئی ہے دشوار

کوئی جب سے مری جانب نگراں گزرا ہے

نگرانیٔ dil o deedaa hui hai dushwaar
koi jab se meri janib nigaran guzra hai

 

 

حال دل سن کے وہ آزردہ ہیں شاید ان کو

اس حکایت پہ شکایت کا گماں گزرا ہے

haal dil sun ke woh aazurda hain shayad un ko
is hekiyaat pay shikayat ka guma guzra hai

 

 

وہ گل افشانیٔ گفتار کا پیکر سالکؔ

آج کوچے سے ترے اشک فشاں گزرا ہے

 woh Gul afshani guftaar ka paiker salik
aaj koochy se tre asshk fishan guzra hai

 

جون ایلیا John Elia

وقت درماں پذیر تھا ہی نہیں

دل لگایا تھا، دل لگا ہی نہیں

 waqt drman Pazeer tha hi nahi
dil lagaya tha, dil laga hi nahi

 

 

ترکِ الفت ہے کس قدر آسان

آج تو جیسے کچھ ہوا ہی نہیں

 tark e ulfat hai kis qader aasaan
aaj to jaisay kuch sun-hwa hi nahi

 

 

ہے کہاں موجہ ءِ صبا و شمیم

جیسے تُو موجہ ءِ صبا ہی نہیں

 hai kahan mojah hamza Saba o shamem
jaisay too mojah hamza Saba hi nahi

 

 

جس سے کوئی خطا ہوئی ہو کبھی

ہم کو وہ آدمی ملا ہی نہیں

 jis se koi khata hui ho kabhi
hum ko woh aadmi mila hi nahi

 

 

وہ بھی کتنا کٹھن رہا ہو گا

جو کہ اچھا بھی تھا ، برا ہی نہیں

 woh bhi kitna kathin raha ho ga
jo ke acha bhi tha, bura hi nahi

 

 

کوئی دیکھے تو میرا حجرہ ءِ ذات

یاں سبھی کچھ وہ تھا جو تھا ہی نہیں

 koi dekhe to mera hujra hamza zaat
yaan sabhi kuch woh tha jo tha hi nahi

 

Tahzeeb Hafi Ghazal  تہذیب حافی 

 

Tahzeeb Hafi Ghazal  تہذیب حافی 

اک حویلی ہوں اس کا در بھی ہوں

خود ہی آنگن خود ہی شجر بھی ہوں

ik hawiley hon is ka dar bhi hon
khud hi aangan khud hi shajar bhi hon

 

 

اپنی مستی میں بہتا دریا ہوں

میں کنارہ بھی ہوں بھنور بھی ہوں

 apni masti mein behta darya hon
mein kinara bhi hon bhanwar bhi hon

 

 

آسماں اور زمیں کی وسعت دیکھ

میں ادھر بھی ہوں اور ادھر بھی ہوں

 aasmaa aur zamee ki wusat dekh
mein idhar bhi hon aur idhar bhi hon

 

 

خود ہی میں خود کو لکھ رہا ہوں خط

اور میں اپنا نامہ بر بھی ہوں

 khud hi mein khud ko likh raha hon khat
aur mein apna nama Bar bhi hon

 

 

داستاں ہوں میں اک طویل مگر

تو جو سن لے تو مختصر بھی ہوں

 dastan hon mein ik taweel magar
to jo sun le to mukhtasir bhi hon

 

 

ایک پھل دار پیڑ ہوں لیکن

وقت آنے پہ بے ثمر بھی ہوں

 aik phal daar pairr hon lekin
waqt anay pay be samar bhi hon

 

 

شاعر لکھنوی   Sahir Lakhnavi 

شاعر لکھنوی   Sahir Lakhnavi 

خود پہ جب دشت کی وحشت کو مسلط کروں گا

اس قدر خاک اڑاؤں گا قیامت کروں گا

khud pay jab dasht ki wehshat ko musallat karoon ga
is qader khaak udaoo ga qayamat karoon ga

 

 

ہجر کی رات مری جان کو آئی ہوئی ہے

بچ گیا تو میں محبت کی مذمت کروں گا

hijar ki raat meri jaan ko aayi hui hai
bach gaya to mein mohabbat ki muzammat karoon ga

 

 

جس کے سائے میں تجھے پہلے پہل دیکھا تھا

میں اسی پیڑ کے نیچے تری بیعت کروں گا

jis ke saaye mein tujhe pehlay pehal dekha tha
mein isi pairr ke neechay tri baet karoon ga

 

 

اب ترے راز سنبھالے نہیں جاتے مجھ سے

میں کسی روز امانت میں خیانت کروں گا

ab tre raaz sambhale nahi jatay mujh se
mein kisi roz amanat mein khayanat karoon ga

 

 

تیری یادوں نے اگر ہاتھ بٹایا میرا

اپنے ٹوٹے ہوئے خوابوں کی مرمت کروں گا

teri yaado ne agar haath btaya mera
–apne tootay hue khowaboon ki murammat karoon ga

 

 

لیلۃ القدر گزاروں گا کسی جنگل میں

نور برسے گا درختوں کی امامت کروں گا

lailh al-qadar guzaron ga kisi jungle mein
noor barsay ga darakhton ki imamat karoon ga

 

 

ہوا کو اور بھی کچھ تیز کر گئے ہیں لوگ

چراغ لے کے نہ جانے کدھر گئے ہیں لوگ

sun-hwa ko aur bhi kuch taiz kar gaye hain log
chairag le ke nah jane kidhar gaye hain log

 

 

سفر کے شوق میں اتنے عذاب جھیلے ہیں

کہ اب تو قصد سفر ہی سے ڈر گئے ہیں لوگ

safar ke shoq mein itnay azaab jhele hain
ke ab to qasad safar hi se dar gaye hain log

 

 

دھواں دھواں نظر آتی ہیں شہر کی گلیاں

سنا ہے آج سر شام گھر گئے ہیں لوگ

dhuwan dhuwan nazar aati hain shehar ki galian
suna hai aaj sir shaam ghar gaye hain log

 

 

جہاں سے نکلے ہیں رستے مسافروں کے لئے

مکان ایسے بھی تعمیر کر گئے ہیں لوگ

jahan se niklay hain raste musafiron ke liye
makaan aisay bhi taamer kar gaye hain log

 

 

کبھی کبھی تو جدائی کی لذتیں دے کر

رفاقتوں میں نیا رنگ بھر گئے ہیں لوگ

kabhi kabhi to judai ki lazite day kar
rafaqaton mein naya rang bhar gaye hain log

 

 

ملال ترک تعلق نہ جانے کیا ہوتا

خیال ترک تعلق سے مر گئے ہیں لوگ

malaal tark talluq nah jane kya hota
khayaal tark talluq se mar gaye hain log

 

 

غرور تند ہواؤں کا یوں بھی توڑا ہے

چراغ ہاتھ پہ رکھ کر گزر گئے ہیں لوگ

ghuroor tund hawaon ka yun bhi tora hai
chairag haath pay rakh kar guzar gaye hain log

 

 

کوئی جواب نہیں فکر کی بلندی کا

زمیں پہ رہ کے بھی افلاک پر گئے ہیں لوگ

koi jawab nahi fikar ki bulandi ka
zamee pay reh ke bhi aflaaq par gaye hain log

 

 

قریب تھے تو فقط واسطہ تھا آنکھوں سے

جدا ہوئے ہیں تو دل میں اتر گئے ہیں لوگ

qareeb thay to faqat vaastaa tha aankhon se
judda hue hain to dil mein utar gaye hain log

 

 

وہ گیسوؤں کی گھٹا ہو کہ دار کا سایہ

جہاں بھی چھاؤں ملی ہے ٹھہر گئے ہیں لوگ

woh gesuwoon ki ghata ho ke daar ka saya
jahan bhi chaon mili hai thehr gaye hain log

 

 

یہ اور بات کہ گھر بجھ گئے ہیں اے شاعرؔ

مگر وطن میں چراغاں تو کر گئے ہیں لوگ

yeh aur baat ke ghar bujh gaye hain ae شاعرؔ
magar watan mein cheraghan to kar gaye hain log

وکاس شرما راز Waqas Sharma Raaz 

وکاس-شرما-راز-Waqas-Sharma-Raaz 

دل کھنڈر میں کھڑے ہوئے ہیں ہم

بازگشت اپنی سن رہے ہیں ہم

dil khandhar mein kharray hue hain hum
baaz gasht apni sun rahay hain hum

 

 

مدتیں ہو گئیں حساب کئے

کیا پتا کتنے رہ گئے ہیں ہم

muddatein ho gayeen hisaab kiye
kya pata kitney reh gaye hain hum

 

 

جب ہمیں سازگار ہے ہی نہیں

جسم کو پہنے کیوں ہوئے ہیں ہم

jab hamein sazgaar hai hi nahi
jism ko pehnay kyun hue hain hum

 

 

رفتہ رفتہ قبول ہوں گے اسے

روشنی کے لیے نئے ہیں ہم

rafta rafta qubool hon ge usay
roshni ke liye naye hain hum

 

 

وحشتیں لگ گئیں ٹھکانے سب

دشت کو راس آ گئے ہیں ہم

wahishtey lag gayeen thikaane sab
dasht ko raas aa gaye hain hum

 

 

دھن تو آہستہ بج رہی ہے رازؔ

رقص کچھ تیز کر رہے ہیں ہم

dhun to aahista baj rahi hai رازؔ
raqs kuch taiz kar rahay hain hum

 

الطاف حسین حالی   Altaf Hussain Hali 

Altaf Hussain Hali 

ہے جستجو کہ خوب سے ہے خوب تر کہاں

اب ٹھہرتی ہے دیکھیے جا کر نظر کہاں

hai justojoo ke khoob se hai khoob tar kahan
ab thahartii hai dekhieye ja kar nazar kahan

 

 

ہیں دور جام اول شب میں خودی سے دور

ہوتی ہے آج دیکھیے ہم کو سحر کہاں

hain daur jaam awwal shab mein khudi se daur
hoti hai aaj dekhieye hum ko sehar kahan

 

 

یا رب اس اختلاط کا انجام ہو بخیر

تھا اس کو ہم سے ربط مگر اس قدر کہاں

ya rab is ikhtilaat ka injaam ho bakhair
tha is ko hum se rabt magar is qader kahan

 

 

اک عمر چاہیئے کہ گوارا ہو نیش عشق

رکھی ہے آج لذت زخم جگر کہاں

ik Umar chahiye ke gawara ho naish ishhq
rakhi hai aaj lazzat zakham jigar kahan

 

 

بس ہو چکا بیاں کسل و رنج راہ کا

خط کا مرے جواب ہے اے نامہ بر کہاں

bas ho chuka bayan kasl o ranj raah ka
khat ka marey jawab hai ae nama Bar kahan

 

 

کون و مکاں سے ہے دل وحشی کنارہ گیر

اس خانماں خراب نے ڈھونڈا ہے گھر کہاں

kon o makan se hai dil wehshi kinara geer
is khaanamaan kharab ne dhoonda hai ghar kahan

 

 

ہم جس پہ مر رہے ہیں وہ ہے بات ہی کچھ اور

عالم میں تجھ سے لاکھ سہی تو مگر کہاں

hum jis pay mar rahay hain woh hai baat hi kuch aur
aalam mein tujh se laakh sahi to magar kahan

 

 

ہوتی نہیں قبول دعا ترک عشق کی

دل چاہتا نہ ہو تو زباں میں اثر کہاں

hoti nahi qubool dua tark ishhq ki
dil chahta nah ho to zuba mein assar kahan

 

 

حالیؔ نشاط نغمہ و مے ڈھونڈھتے ہو اب

آئے ہو وقت صبح رہے رات بھر کہاں

حالیؔ nishat naghma o me dhondhte ho ab
aaye ho waqt subah rahay raat bhar kahan

 

مرزا غالب  Mirza Ghalib Ghazals 

 

میں انہیں چھیڑوں اور کچھ نہ کہیں

چل نکلتے جو مے پیے ہوتے

mein inhen chairoon aur kuch nah kahin
chal nikaltay jo me piyay hotay

 

 

قہر ہو یا بلا ہو جو کچھ ہو

کاش کے تم مرے لیے ہوتے

qehar ho ya bulaa ho jo kuch ho
kash ke tum marey liye hotay

 

 

میری قسمت میں غم گر اتنا تھا

دل بھی یارب کئی دیے ہوتے

meri qismat mein gham gir itna tha
dil bhi yarab kayi diye hotay

 

 

آ ہی جاتا وہ راہ پر غالبؔ

کوئی دن اور بھی جیے ہوتے

 aa hi jata woh raah par Ghalib 
koi din aur bhi jie hotay

 

سلمان اختر  Salman Akhtar 

 

درد جب شاعری میں ڈھلتے ہیں

دل میں ہر سو چراغ جلتے ہیں

 dard jab shairi mein dhalte hain
dil mein har so chairag jaltay hain

 

 

کوئی شے ایک سی نہیں رہتی

عمر ڈھلتی ہے غم بدلتے ہیں

koi shai aik si nahi rehti
Umar dhalti hai gham bdalty hain

 

 

جو نہیں مانگتا کسی سے کچھ

شہر کے لوگ اس سے جلتے ہیں

 jo nahi mangta kisi se kuch
shehar ke log is se jaltay hain

 

 

اس کی منزل جدا ہماری جدا

آج گو ساتھ ساتھ چلتے ہیں

 is ki manzil judda hamari judda
aaj go sath sath chaltay hain

 

 

لکھنؤ شاعری شراب جنوں

رشتے سو طرح کے نکلتے ہیں

 lkhno shairi sharaab junoo
rishte so terhan ke nikaltay hain

 

احمد ندیم قاسمی  Ahmad Nadeem Qasmi 

 

تجھے کھو کر بھی تجھے پاؤں جہاں تک دیکھوں

حسن یزداں سے تجھے حسن بتاں تک دیکھوں

 tujhe kho kar bhi tujhe paon jahan tak daikhon
husn Yazdan se tujhe husn butaan tak daikhon

 

 

تو نے یوں دیکھا ہے جیسے کبھی دیکھا ہی نہ تھا

میں تو دل میں ترے قدموں کے نشاں تک دیکھوں

 to ne yun dekha hai jaisay kabhi dekha hi nah tha
mein to dil mein tre qadmon ke nishaa tak daikhon

 

 

صرف اس شوق میں پوچھی ہیں ہزاروں باتیں

میں ترا حسن ترے حسن بیاں تک دیکھوں

 sirf is shoq mein poochi hain hazaron baatein
mein tra husn tre husn bayan tak daikhon

 

 

میرے ویرانۂ جاں میں تری یادوں کے طفیل

پھول کھلتے نظر آتے ہیں جہاں تک دیکھوں

 mere virana jaan mein tri yaado ke tufail
phool khultay nazar atay hain jahan tak daikhon

 

 

وقت نے ذہن میں دھندلا دیئے تیرے خد و خال

یوں تو میں ٹوٹتے تاروں کا دھواں تک دیکھوں

 waqt ne zehen mein dhundlaa diye tairay khad o khhaal
yun to mein toot-te taron ka dhuwan tak daikhon

 

 

دل گیا تھا تو یہ آنکھیں بھی کوئی لے جاتا

میں فقط ایک ہی تصویر کہاں تک دیکھوں

 dil gaya tha to yeh ankhen bhi koi le jata
mein faqat aik hi tasweer kahan tak daikhon

 

 

اک حقیقت سہی فردوس میں حوروں کا وجود

حسن انساں سے نمٹ لوں تو وہاں تک دیکھوں

 ik haqeeqat sahi Firdous mein hurron ka wujood
husn insaa se nimat lon to wahan tak daikhon

 

منیرؔ شکوہ آبادی  Muneer Shikwa Abadi 

 

اے بت جو شب ہجر میں دل تھام نہ لیتے

کلمہ میں بھی ہوتا تو ترا نام نہ لیتے

ae buut jo shab hijar mein dil thaam nah letay
kalma mein bhi hota to tra naam nah letay

 

 

ضد پر اگر آ جائیں ہم اے رشک مسیحا

مر جاتے مگر منہ سے ترا نام نہ لیتے

zid par agar aa jayen hum ae rashk masiihaa
mar jatay magar mun se tra naam nah letay

 

 

کامل کوئی ملتا جو خریدار دل و جاں

یہ جنس یونہی بیچتے ہم دام نہ لیتے

kaamil koi milta jo khredar dil o jaan
yeh jins yuhin baichtay hum daam nah letay

 

 

کیوں حشر میں دیوانہ ہمیں کہہ کے پکارا

نفرت تھی تو اب بھی وہ مرا نام نہ لیتے

kyun hashar mein deewana hamein keh ke puraka
nafrat thi to ab bhi woh mra naam nah letay

 

 

وحشت کدۂ دہر میں چلتا جو بس اپنا

دشمن سے محبت کے سوا کام نہ لیتے

wehshat kida deher mein chalta jo bas apna
dushman se mohabbat ke siwa kaam nah letay

 

 

جاروب کشی ملتی اگر کرب و بلا کی

ہاتھوں سے منیرؔ اور کوئی کام نہ لیتے

jaroob kashi millti agar karb o bulaa ki
hathon se منیرؔ aur koi kaam nah letay

 

انور مسعود Anwar Masood 

 

اب کہاں اور کسی چیز کی جا رکھی ہے

دل میں اک تیری تمنا جو بسا رکھی ہے

ab kahan aur kisi cheez ki ja rakhi hai
dil mein ik teri tamanna jo basa rakhi hai

 

 

سر بکف میں بھی ہوں شمشیر بکف ہے تو بھی

تو نے کس دن پہ یہ تقریب اٹھا رکھی ہے

sir bakaf mein bhi hon Shamsheer bakaf hai to bhi
to ne kis din pay yeh taqreeb utha rakhi hai

 

 

دل سلگتا ہے ترے سرد رویے سے مرا

دیکھ اس برف نے کیا آگ لگا رکھی ہے

 dil sulagta hai tre sard ravayye se mra
dekh is barf ne kya aag laga rakhi hai

 

 

آئنہ دیکھ ذرا کیا میں غلط کہتا ہوں

تو نے خود سے بھی کوئی بات چھپا رکھی ہے

 aaynh dekh zara kya mein ghalat kehta hon
to ne khud se bhi koi baat chhupa rakhi hai

 

 

جیسے تو حکم کرے دل مرا ویسے دھڑکے

یہ گھڑی تیرے اشاروں سے ملا رکھی ہے

 jaisay to hukum kere dil mra waisay dhadke
yeh ghari tairay ishaaron se mila rakhi hai

 

 

مطمئن مجھ سے نہیں ہے جو رعیت میری

یہ مرا تاج رکھا ہے یہ قبا رکھی ہے

 mutmaen mujh se nahi hai jo raiyat meri
yeh mra taaj rakha hai yeh quba rakhi hai

 

 

گوہر اشک سے خالی نہیں آنکھیں انورؔ

یہی پونجی تو زمانے سے بچا رکھی ہے

 gohar asshk se khaali nahi ankhen Anwar 
yahi poonji to zamane se bacha rakhi hai

شہزاد احمد Shehzad Ahmad

 

یہ کس غم سے عقیدت ہو گئی ہے

غم دنیا سے فرصت ہو گئی ہے

 yeh kis gham se aqeedat ho gayi hai
gham duniya se fursat ho gayi hai

 

 

ہم اپنے حال پر خود رو دیے ہیں

کبھی ایسی بھی حالت ہو گئی ہے

 hum –apne haal par khud ro diye hain
kabhi aisi bhi haalat ho gayi hai

 

 

اگر دو دل کہیں بھی مل گئے ہیں

زمانے کو شکایت ہو گئی ہے

 agar do dil kahin bhi mil gaye hain
zamane ko shikayat ho gayi hai

 

 

کہاں میں اور کہاں آلام ہستی

مگر جینا تو عادت ہو گئی ہے

 kahan mein aur kahan alaam hasti
magar jeena to aadat ho gayi hai

 

 

ذرا سا غم ہوا اور رو دیے ہم

بڑی نازک طبیعت ہو گئی ہے

 zara sa gham sun-hwa aur ro diye hum
barri naazuk tabiyat ho gayi hai

 

 

خبر کیا ہو جہاں والوں کی ہم کو

انہیں دیکھے بھی مدت ہو گئی ہے

 khabar kya ho jahan walon ki hum ko
inhen dekhe bhi muddat ho gayi hai

 

 

سکوں ملنے لگا شہزادؔ مجھ کو

تڑپ جانے کی صورت ہو گئی ہے

sakoo milnay laga شہزادؔ mujh ko
tarap jane ki soorat ho gayi hai

 

 

جاں نثاراختر Jan Nisar Akhtar 

 

لوگ کہتے ہیں کہ تو اب بھی خفا ہے مجھ سے

تیری آنکھوں نے تو کچھ اور کہا ہے مجھ سے

 og kehte hain ke to ab bhi khafa hai mujh se
teri aankhon ne to kuch aur kaha hai mujh se

 

 

ہائے اس وقت کو کوسوں کہ دعا دوں یارو

جس نے ہر درد مرا چھین لیا ہے مجھ سے

 haae is waqt ko kosoon ke dua dun yaaro
jis ne har dard mra chean liya hai mujh se

 

 

دل کا یہ حال کہ دھڑکے ہی چلا جاتا ہے

ایسا لگتا ہے کوئی جرم ہوا ہے مجھ سے

 dil ka yeh haal ke dhadke hi chala jata hai
aisa lagta hai koi jurm sun-hwa hai mujh se

 

 

کھو گیا آج کہاں رزق کا دینے والا

کوئی روٹی جو کھڑا مانگ رہا ہے مجھ سے

 kho gaya aaj kahan rizaq ka dainay wala
koi roti jo khara maang raha hai mujh se

 

 

اب مرے قتل کی تدبیر تو کرنی ہوگی

کون سا راز ہے تیرا جو چھپا ہے مجھ سے

 ab marey qatal ki tadbeer to karni hogi
kon sa raaz hai tera jo chhupa hai mujh se

 

 

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *