john elia poetry | Jaun Elia Sad Poetry, Ghazal & Shayari

john elia poetry | Jaun Elia Sad Poetry, Ghazal & Shayari

The real name of John Elia is Syed Hussain Jun Asghar Naqvi. After the fame of poetry, John Elia became famous. John Elia poetry touches the heart and the reason is that he was an Urdu poet, philosopher, biographer, and South Asian scholar. He was famous for his strange poetry and movements. John Elia sad poetry, John Elia Shayari, Jaun Elia Ghazal are loved today in Pakistan as well as all over the world. John Elia style of poetry was different from previous and previous poets. And the biggest reason for John Elia fame is the fact-based poetry that is loved by people of all natures. So scroll down to see and read John Elia Pottery and read John Elia Pottery in Urdu in the form of text and pictures.

 

 

john-elia-poetry

john elia poetry, Shayari

 

ہے سینے میں اک عجب حشر برپا

کہ دل سے بے قراری جارہی ہے۔

hai seenay mein ik ajab hashar barpaa
ke dil se be qarari jarahi hai .

 

ے نگاہِ ناز ادھر دیکھ کہ میں بھی جوان تھا

مجھ کو ہجر کھا گیا ، مجھ کو شراب پی گئی

y ngahِ naz idhar dekh ke mein bhi jawan tha
mujh ko hijar kha gaya, mujh ko sharaab pi gayi

 

بیچ میں آنے والے تو بس بِن کارن ہلکان ہوئے

سید جی تھا سارا کھیل، تمہارا اور برہمن کا

beech mein anay walay to bas bِn corn halkaan hue
syed jee tha sara khail, tumhara aur barhaman ka

 

جون بڑا ہرجائی نکلا، پر وہ تو بیراگی تھا

ایک رسیلی، ایک انیلی، البیلی امروہن کا

June bara herjaai nikla, par woh to Bairagi tha
aik raseeli, aik anili, albeli amrohan ka

 

یہ ہے اک جبر ____اتفاق نہیں..؎

“جون” ہونا کوئی مزاق نہیں..؎

yeh hai ik jabar ____ittifaq  nahi. . ?
” June ” hona koi mazzaq nahi

 

چھوڑو صاحب_______ وہ تو حور ہے..!!

اور حوریں گناہ گاروں کو کہا ملتی ہیں

chhorro sahib_______ woh to hoor hai. .! !
aur hooren gunah garon ko kaha millti hain

 

آرزو کے کنول کھلے ہی نہ تھے

فرض کر لو کہ ہم ملے ہی نہ تھے

arzoo ke kanwal khulay hi nah thay
farz kar lo ke hum miley hi nah thay

 

خیمہ گہہِ فراق سے، خیمہ گہہِ وصال تک

ایک اُداس سی ادا مُجھ کو منا کے لے گئی

khaima gahi faraaq se, khaima gahi visale tak
aik udas si ada mujh ko mana ke le gayi

 

ہجر میں جل رہا تھا میں اور پِگھل رہا تھا میں

ایک خُنَک سی روشنی مجھ کو بُجھا کے لے گئی

hijar mein jal raha tha mein aur pِghl raha tha mein
aik khunk si roshni mujh ko bhuja ke le gayi

 

ایک شمیمِ پُر خیال، شہرِ خیال میں ہمیں

خواب دکھا کے لائی تھی، خواب دِکھا کے لے گئی

aik Shamem pur khayaal, shehr-e khayaal mein hamein
khawab dikha ke layi thi, khawab dِkha ke le gayi

 

 

john elia Ghazal

john elia Ghazal : 1

 

تمھارا ہجر منا لوں اگر اجازت ہو

میں دل کسی سے لگا لوں اگر اجازت ہو

tumahra hijar mana lon agar ijazat ho
mein dil kisi se laga lon agar ijazat ho

 

تمھارے بعد بھلا کیا ہے وعدہ و پیماں

بس اپنا وقت گنوا لوں اگر اجازت ہو

tumhare baad bhala kya hai wada o paimaan
bas apna waqt ganwaa lon agar ijazat ho

 

تمھارے ہجر کی شب ہائے تار میں جاناں

کوئی چراغ جلا لوں اگر اجازت ہو

tumhare hijar ki shab haae taar mein janan
koi chairag jala lon agar ijazat ho

 

جنوں وہی ہے، وہی میں، مگر ہے شہر نیا

یہاں بھی شور مچا لوں اگر اجازت ہو

junoo wohi hai, wohi mein, magar hai shehar naya
yahan bhi shore macha lon agar ijazat ho

 

کسے ہے خواہشِ مرہم گری مگر پھر بھی

میں اپنے زخم دکھا لوں اگر اجازت ہو

kisay hai khwahish marham giri magar phir bhi
mein –apne zakham dikha lon agar ijazat ho

 

تمھاری یاد میں جینے کی آرزو ہے ابھی

کچھ اپنا حال سنبھال لوں اگر اجازت ہو

 tumhari yaad mein jeeney ki arzoo hai abhi
kuch apna haal sambhaal lon agar ijazat ho

 

 

jaun elia Ghazal

john elia Ghazal : 2

 

نام ہی کیا نشاں ہی کیا خواب و خیال ہو گئے
تیری مثال دے کے ہم تیری مثال ہو گئے

naam hi kya nishaa hi kya khawab o khayaal ho gaye
teri misaal day ke hum teri misaal ho gaye

 

سایہ ذات سے بھی رم، عکس صفات سے بھی رم
دشتِ غزل میں آ کے دیکھ ہم تو غزال ہو گئے

saya zaat se bhi rim, aks sifaat se bhi rim
dast-e ghazal mein aa ke dekh hum to Ghazaal ho gaye

 

کتنے ہی نشہ ہائے ذوق، کتنے ہی جذبہ ہائے شوق
رسمِ تپاکِ یار سے رو بہ زوال ہو گئے

kitney hi nasha haae zouq, kitney hi jazba haae shoq
rasm-e tapaak yaar se ro bah zawaal ho gaye

 

کون سا قافلہ ہے یہ، جس کے جرس کا ہے یہ شور
میں تو نڈھال ہو گیا، ہم تو نڈھال ہو گئے

kon sa qaafla hai yeh, jis ke Jarass ka hai yeh shore
mein to nidhaal ho gaya, hum to nidhaal ho gaye

 

شور اٹھا مگر تجھے لذت گوش تو ملی
خون بہا مگر ترے ہاتھ تو لال ہو گئے

shore utha magar tujhe lazzat gosh to mili
khoon baha magar tre haath to laal ho gaye

 

ہم نفسانِ وضع دار، مستعانِ بردبار
ہم تو تمہارے واسطے ایک وبال ہو گئے

hum nafsan waza daar, mustaan Burdbar
hum to tumahray wastay aik wabaal ho gaye

 

جون کرو گے کب تلک اپنا مثالیہ تلاش
اب کئی ہجر ہو چکے، اب کئی سال ہو گئے

June karo ge kab talak apna masaliya talaash
ab kayi hijar ho chuke, ab kayi saal ho gaye

 

 

john elia Ghazal

john elia Ghazal : 3

 

باہر گزار دی کبھی اندر بھی آئیں گے

ہم سے یہ پوچھنا کبھی ہم گھر بھی آئیں گے

bahar guzaar di kabhi andar bhi ayen ge
hum se yeh poochna kabhi hum ghar bhi ayen ge

 

خود آہنی نہیں ہو تو پوشش ہو آہنی

یوں شیشہ ہی رہو گے تو پتھر بھی آئیں گے

khud aahinii nahi ho to poshish ho aahinii
yun sheesha hi raho ge to pathar bhi ayen ge

 

یہ دشت بے طرف ہے گمانوں کا موج خیز

اس میں سراب کیا کہ سمندر بھی آئیں گے

yeh dasht be taraf hai gumano ka mouj khaiz
is mein saraab kya ke samandar bhi ayen ge

 

آشفتگی کی فصل کا آغاز ہے ابھی

آشفتگاں پلٹ کے ابھی گھر بھی آئیں گے

aashfatgi ki fasal ka aaghaz hai abhi
ashdatgan  palat ke abhi ghar bhi ayen ge

 

دیکھیں تو چل کے یار طلسمات سمت دل

مرنا بھی پڑ گیا تو چلو مر بھی آئیں گے

dekhen to chal ke yaar talismaat simt dil
marna bhi par gaya to chalo mar bhi ayen ge

 

یہ شخص آج کچھ نہیں پر کل یہ دیکھیو

اس کی طرف قدم ہی نہیں سر بھی آئیں گے

yeh shakhs aaj kuch nahi par kal yeh deko
is ki taraf qadam hi nahi sir bhi ayen ge

 

 

john elia Ghazal

john elia Ghazal : 4

 

وقت درماں پذیر تھا ہی نہیں

دل لگایا تھا، دل لگا ہی نہیں

waqt drman Pazeer tha hi nahi
dil lagaya tha, dil laga hi nahi

 

ترکِ الفت ہے کس قدر آسان

آج تو جیسے کچھ ہوا ہی نہیں

tark e ulfat hai kis qader aasaan
aaj to jaisay kuch sun-hwa hi nahi

 

ہے کہاں موجہ ءِ صبا و شمیم

جیسے تُو موجہ ءِ صبا ہی نہیں

hai kahan mojah hamza Saba o shamem
jaisay too mojah hamza Saba hi nahi

 

جس سے کوئی خطا ہوئی ہو کبھی

ہم کو وہ آدمی ملا ہی نہیں

jis se koi khata hui ho kabhi
hum ko woh aadmi mila hi nahi

 

وہ بھی کتنا کٹھن رہا ہو گا

جو کہ اچھا بھی تھا ، برا ہی نہیں

woh bhi kitna kathin raha ho ga
jo ke acha bhi tha, bura hi nahi

 

کوئی دیکھے تو میرا حجرہ ءِ ذات

یاں سبھی کچھ وہ تھا جو تھا ہی نہیں
koi dekhe to mera hujra hamza zaat
yaan sabhi kuch woh tha jo tha hi nahi

 

ایک ہی اپنا ملنے والا تھا

ایسا بچھڑا کہ پھر ملا ہی نہیں

aik hi apna milnay wala tha
aisa bitchrha ke phir mila hi nahi

 

جون ایلیا شاعری :

جون ایلیا کا اصل نام سید حسین جون اصغر نقوی ہیں شاعری کی شہرت کے بعد جون ایلیا کے نام پر مشہور ہوا۔ جون ایلیا شاعری دل کو چھومتے ہیں اور اسکا وجہ یہ ہیں وہ ایک اردو شاعر، فلسفی، سوانح نگار، اور جنوبی ایشیا کے اسکالر تھے۔ عجیب شاعری اور حرکات کی وجہ سے لوگوں میں شہرت پائی تھی۔ جون ایلیا کی سیڈ شاعری ، جون ایلیا کی عزلیں، جون ایلیا کی پوٹری آج پاکستان کے ساتھ ساتھ دنیا بھر میں پسند کی جاتی ہیں۔ جون ایلیا کی شاعری کا انداز پچھلے اور اگلے شعراء سے مختلف تھے۔ اور جون ایلیا کی شہرت کا سب سے بڑا وجہ حقیقت پر مبنی شاعری ہیں جوکہ ہر طبیعت کے انسان کو بہت پسند ہوتا ہیں۔ لھذا جون ایلیا پوٹری دیکھنے اور پڑھنے کیلئے اوپر سکرول کیجئے اور جون ایلیا کی پوٹری اردو زبان میں ٹیکسٹ اور تصاویر کی صورت میں پڑھ لیجئے۔

, ,

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *