Parveen Shakir Poetry, Ghazals, Shayari in Urdu- Pashtourdu

parveen shakir poetry, Ghazals, Shayari in Urdu

Every Pakistani must know Parveen Shakir poetry because she is one of the leading poets of Pakistan. He was born on November 24, 1952 and died on December 16, 1994. She held the position of Seoul Servant and also wrote poems in Urdu. Parveen Shakir resignation has not been prolonged till date and this is because it contains truthful and loving poems. Pureen Shakir’s writings include denial, self-talk, fragrances. Parveen Shakir poetry gives a spiritual peace due to which anyone becomes crazy about his poetry. Being a woman, Parvin Shakir loved her language and loved it to such an extent that her poems could not be old to this day. There are thousands of poets in Pakistan and they write poems in a very modern way but no one has been able to compete with Parveen Shakir Urdu poetry till date. So we have found some excerpts and some poems from many books that you will love. Parveen Shakir’s beautiful Urdu poetry and verses are mentioned below. Go and read it.  

Parveen Shakir Poetry

Parveen Shakir Poetry in Urdu 

 
لو ! میں آنکھیں بند کیے لیتی ہوں ، اب تم رخصت ہو دل تو جانے کیا کہتا ہے ، لیکن دل کا کہنا کیا lo! mein ankhen band kiye layte hon, ab tum rukhsat ho dil to jane kya kehta hai, lekin dil ka kehna kya     ‏تھک گیا ہے دل وحشی مرا فریاد سے بھی جی بہلتا نہیں اے دوست تری یاد سے بھی ٕtakk gaya hai dil wehshi mra faryaad se bhi jee behalta nahi ae dost tri yaad se bhi     وہ روح مین خوشبو کی طرح ہو گیا تحلیل جو دور بہت چاند کے حالوں کی طرح تھا، woh rooh mean khushbu ki terhan ho gaya tahleel jo daur bohat chaand ke haloon ki terhan tha ,     ‏گئے دنوں کے تعاقب میں تتلیوں کی طرح… ترے خیال کے ہمراہ کر رہی ہوں سفر Gaye dinon ke taqub mein titliyon ki terhan. . . tre khayaal ke hamrah kar rahi hon safar     آندھی کی زد میں آئے ہُوئے پھُولوں کی طرح… میں ٹکڑے ٹکڑے ہوکے فضا میں بکھر گئی aandhi ki zad mein aaye huay Phoolon ki terhan. . . mein tukre tukre hoke fiza mein bikhar gayi     طائر جاں کے گزرنے سے بڑا سانحہ ہے شوق پرواز کا ٹوٹے ہوئے پر میں رہنا۔ Tair jaan ke guzarnay se bara saneha hai shoq parwaaz ka tootay hue par mein rehna .
      parveen shakir poetry  

parveen shakir poetry in urdu two lines

  پانیوں پانیوں جب چاند کا ہالہ اُترا نیند کی جِھیل پہ اِک خواب پُرانا اُترا paanion paanion jab chaand ka Haala utra neend ki Jheel pay ik khawab purana utra   آزمائش میں کہاں عِشق بھی پُورا اُترا حُسن کے آگے تو، تقدِیر کا لِکھّا اُترا azmaish mein kahan ishq bhi poora utra husn ke agay to, Taqdeer ka Likha utra   دُھوپ ڈھلنے لگی، دِیوار سے سایا اُترا سطح ہموار ہُوئی، پیار کا دریا اُترا dhoop dhalnay lagi, Deewar se sayaa utra satah hamwar hui, pyar ka darya utra   یاد سے نام مِٹا، ذہن سے چہرہ اُترا چند لمحوں میں نظر سے تِری کیا کیا اُترا yaad se naam mitta, zehen se chehra utra chand lamhoon mein nazar se tِri kya kya utra   آج کی شب میں پریشاں ہُوں، تو یُوں لگتا ہے آج مہتاب کا چہرہ بھی ہے اُترا اُترا aaj ki shab mein pareshaa hoon, to Yun lagta hai aaj mehtaab ka chehra bhi hai utra utra   میری وحشت رَمِ آہُو سے کہیں بڑھ کر تھی جب مِری ذات میں تنہائی کا صحرا اُترا meri wehshat rim ahu se kahin barh kar thi jab mِri zaat mein tanhai ka sehraa utra   اِک شبِ غم کے اندھیرے پہ نہیں ہے موقوف تُونے جو زخم لگایا ہے، وہ گہرا اُترا ik shab_e_ gham ke andheray pay nahi hai moqoof tunay jo zakham lagaya hai, woh gehra utra   حلقہ در حلقہ برائے پندو وعظ آنے لگے تیرے کوچے میں گئے اور لوگ سمجھانے لگے halqa dar halqa baraye pando waaz anay lagey tairay koochy mein gaye aur log samjhane lagey   عکسِ بے منتظر سے دل تسکین سی پانے لگے دُھوپ میں جیسے کوئی آئینہ چمکانے لگے aks be muntazir se dil taskeen si panay lagey dhoop mein jaisay koi aaina chamkanay lagey   باغ اور اَبر بہار اور رات اور خوشبوئے دوست ایک خواہش سو طرح کے رنگ دکھلانے لگے baagh aur aَbr bahhar aur raat aur خوشبوئے dost aik khwahish so terhan ke rang dikhlanay lagey   اتنی خاموشی بھی گردو پیش میں طاری نہ ہو دل دھڑکنے کی صدا کانوں میں صاف آنے لگے itni khamoshi bhi gardo paish mein taari nah ho dil dhadakne ki sada kaanon mein saaf anay lagey   زرد ہوتا جا رہا ہے صحنِ دل کا ہر شجر جس طرح اندر ہی اندر دُکھ کوئی کھانے لگے zard hota ja raha hai sehan dil ka har shajar jis terhan andar hi andar dukh koi khanay lagey   تیری دُنیا سے نِکل جاؤ ں میں خاموشی کے ساتھ قبل اس کے تو مرے سائے سے کترانے لگے teri duniya se nikal jao n mein khamoshi ke sath qabal is ke to marey saaye se katraane lagey   پیش آثارِ قدیمہ رُک گئے میرے قدم شہر کے دیوار و در کچھ جانے پہچانے لگے paish aasarِ Qadima ruqq gaye mere qadam shehar ke deewar o dar kuch jane pehchane lagey   Parveen Shakir Shayari

Parveen Shakir Shayari

تیری خوشبو کا پتا کرتی ہے

مجھ پہ احسان ہوا کرتی ہے

teri khushbu ka pata karti hai mujh pay ahsaan sun-hwa karti hai

 

چوم کر پھول کو آہستہ سے

معجزہ باد صبا کرتی ہے choom kar phool ko aahista se moujza bad Saba karti hai

 

کھول کر بند قبا گل کے ہوا

آج خوشبو کو رہا کرتی ہے

khol kar band quba Gul ke sun-hwa aaj khushbu ko raha karti hai

 

ابر برستے تو عنایت اس کی

شاخ تو صرف دعا کرتی ہے

abr baraste to inayat is ki shaakh to sirf dua karti hai

 

زندگی پھر سے فضا میں روشن

مشعل برگ حنا کرتی ہے

zindagi phir se fiza mein roshan Mashal barg hina karti hai

 

ہم نے دیکھی ہے وہ اجلی ساعت

رات جب شعر کہا کرتی ہے

hum ne dekhi hai woh ujli saa-at raat jab shair kaha karti hai

 

شب کی تنہائی میں اب تو اکثر

گفتگو تجھ سے رہا کرتی ہے

shab ki tanhai mein ab to aksar guftagu tujh se raha karti hai

 

دل کو اس راہ پہ چلنا ہی نہیں

جو مجھے تجھ سے جدا کرتی ہے

dil ko is raah pay chalna hi nahi jo mujhe tujh se judda karti hai

 

زندگی میری تھی لیکن اب تو

تیرے کہنے میں رہا کرتی ہے

zindagi meri thi lekin ab to tairay kehnay mein raha karti hai

 

اس نے دیکھا ہی نہیں ورنہ یہ آنکھ

دل کا احوال کہا کرتی ہے

is ne dekha hi nahi warna yeh aankh dil ka ahwaal kaha karti hai

 

مصحف دل پہ عجب رنگوں میں

ایک تصویر بنا کرتی ہے

mshf dil pay ajab rangon mein aik tasweer bana karti hai

 

بے نیاز کف دریا انگشت

ریت پر نام لکھا کرتی ہے

be niaz kaf darya angisht rait par naam likha karti hai

 

دیکھ تو آن کے چہرہ میرا

اک نظر بھی تری کیا کرتی ہے

dekh to aan ke chehra mera ik nazar bhi tri kya karti hai

 

زندگی بھر کی یہ تاخیر اپنی

رنج ملنے کا سوا کرتی ہے

zindagi bhar ki yeh takheer apni ranj milnay ka siwa karti hai

 

شام پڑتے ہی کسی شخص کی یاد

کوچۂ جاں میں صدا کرتی ہے

shaam parte hi kisi shakhs ki yaad koocha jaan mein sada karti hai

 

مسئلہ جب بھی چراغوں کا اٹھا

فیصلہ صرف ہوا کرتی ہے

masla jab bhi charaghoon ka utha faisla sirf sun-hwa karti hai

 

مجھ سے بھی اس کا ہے ویسا ہی سلوک

حال جو تیرا انا کرتی ہے

mujh se bhi is ka hai waisa hi sulooq haal jo tera anaa karti hai

 

دکھ ہوا کرتا ہے کچھ اور بیاں

بات کچھ اور ہوا کرتی ہے

dukh sun-hwa karta hai kuch aur bayan baat kuch aur sun-hwa karti hai

    Parveen Shakir Ghazal

Parveen Shakir Ghazal

 

کھلے گی اس نظر پہ چشم تر آہستہ آہستہ کیا جاتا ہے پانی میں سفر آہستہ آہستہ

khulay gi is nazar pay chasham tar aahista aahista kya jata hai pani mein safar aahista aahista

   

کوئی زنجیر پھر واپس وہیں پر لے کے آتی ہے کٹھن ہو راہ تو چھٹتا ہے گھر آہستہ آہستہ

koi zanjeer phir wapas wahein par le ke aati hai kathin ho raah to چھٹتا hai ghar aahista aahista

   

بدل دینا ہے رستہ یا کہیں پر بیٹھ جانا ہے کہ تھکتا جا رہا ہے ہم سفر آہستہ آہستہ

badal dena hai rasta ya kahin par baith jana hai ke thakta ja raha hai hum safar aahista aahista

   

خلش کے ساتھ اس دل سے نہ میری جاں نکل جائے کھنچے تیر شناسائی مگر آہستہ آہستہ

khalish ke sath is dil se nah meri jaan nikal jaye khnche teer shanasaai magar aahista aahista

   

ہوا سے سرکشی میں پھول کا اپنا زیاں دیکھا سو جھکتا جا رہا ہے اب یہ سر آہستہ آہستہ

sun-hwa se sar kashi mein phool ka apna zayan dekha so jhukta ja raha hai ab yeh sir aahista aahista

   

مری شعلہ مزاجی کو وہ جنگل کیسے راس آئے ہوا بھی سانس لیتی ہو جدھر آہستہ آہستہ

meri shola mizaji ko woh jungle kaisay raas aaye sun-hwa bhi saans layte ho jidhar aahista aahista

   

اپنی رسوائی ترے نام کا چرچا دیکھوں

اک ذرا شعر کہوں اور میں کیا کیا دیکھوں

apni ruswai tre naam ka charcha daikhon ik zara shair kahoon aur mein kya kya daikhon

   

نیند آ جائے تو کیا محفلیں برپا دیکھوں

آنکھ کھل جائے تو تنہائی کا صحرا دیکھوں

neend aa jaye to kya mahfilen barpaa daikhon aankh khil jaye to tanhai ka sehraa daikhon

   

شام بھی ہو گئی دھندلا گئیں آنکھیں بھی مری

بھولنے والے میں کب تک ترا رستا دیکھوں

shaam bhi ho gayi dhundlaa gayeen ankhen bhi meri bhoolnay walay mein kab tak tra rasta daikhon

   

ایک اک کر کے مجھے چھوڑ گئیں سب سکھیاں

آج میں خود کو تری یاد میں تنہا دیکھوں

aik ik kar ke mujhe chore gayeen sab sakhyaan aaj mein khud ko tri yaad mein tanha daikhon

   

کاش صندل سے مری مانگ اجالے آ کر

اتنے غیروں میں وہی ہاتھ جو اپنا دیکھوں

kash sandal se meri maang ujalay aa kar itnay gheiron mein wohi haath jo apna daikhon

   

تو مرا کچھ نہیں لگتا ہے مگر جان حیات

جانے کیوں تیرے لیے دل کو دھڑکنا دیکھوں

to mra kuch nahi lagta hai magar jaan hayaat jane kyun tairay liye dil ko dharakna daikhon

   

بند کر کے مری آنکھیں وہ شرارت سے ہنسے

بوجھے جانے کا میں ہر روز تماشا دیکھوں

band kar ke meri ankhen woh shararat se hanse boojhay jane ka mein har roz tamasha daikhon

   

سب ضدیں اس کی میں پوری کروں ہر بات سنوں

ایک بچے کی طرح سے اسے ہنستا دیکھوں

sab ziden is ki mein poori karoon har baat sunon aik bachay ki terhan se usay hanstaa daikhon

   

مجھ پہ چھا جائے وہ برسات کی خوشبو کی طرح

انگ انگ اپنا اسی رت میں مہکتا دیکھوں

mujh pay chhaa jaye woh barsaat ki khushbu ki terhan ang ang apna isi ruut mein mehkta daikhon

   

پھول کی طرح مرے جسم کا ہر لب کھل جائے

پنکھڑی پنکھڑی ان ہونٹوں کا سایا دیکھوں

phool ki terhan marey jism ka har lab khil jaye pankhari pankhari un honton ka sayaa daikhon

   

میں نے جس لمحے کو پوجا ہے اسے بس اک بار

خواب بن کر تری آنکھوں میں اترتا دیکھوں

mein ne jis lamhay ko pooja hai usay bas ik baar khawab ban kar tri aankhon mein utartaa daikhon

   

تو مری طرح سے یکتا ہے مگر میرے حبیب

جی میں آتا ہے کوئی اور بھی تجھ سا دیکھوں

to meri terhan se yaktaa hai magar mere habib jee mein aata hai koi aur bhi tujh sa daikhon

   

ٹوٹ جائیں کہ پگھل جائیں مرے کچے گھڑے

تجھ کو میں دیکھوں کہ یہ آگ کا دریا دیکھوں

toot jayen ke pighal jayen marey kachay gharrey tujh ko mein daikhon ke yeh aag ka darya daikhon

, ,

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *