Peer Naseer UD Din Naseer Poetry- Pashtourdu

peer naseer ud din naseer poetry in urdu, pir naseer uddin naseer Urdu Shayari

Pir Naseeruddin Naseer Sahib was one of the famous scholars of Punjab. He was born in Godra Sharif and was buried there. Pir Sahib was a great ascetic as well as a great poet and scholar who you can guess by reading his poems. Pir Naseer Sahib’s soul-shaking poetry has gained a lot of fame and the reason for this fame is due to its authenticity and experience. Therefore, if you are also interested in reading the poems of Naseer-ud-Din Naseer Sahib, then scroll down without hesitation and read the poems.

 

pir naseer uddin naseer Poetry in Urdu with Pics

peer naseer ud din naseer poetry

 

چار تنکوں کا سہارا کچھ نہیں

صحنِ گلشن میں ہمارا کچھ نہیں

chaar tinkon ka sahara kuch nahi
sehan Gulshan mein hamara kuch nahi

چین لوٹا، دل مِرا ویراں کیا

بس بگاڑا ہے، سنوارا کچھ نہیں

chain lota, dil Mera viran kya
bas bigaara hai, sanvara kuch nahi

جان دینے کے لیے حاضر ہیں ہم

عاشقی میں یہ خسارا کچھ نہیں

jaan dainay ke liye haazir hain hum
aashiqii mein yeh khasaara kuch nahi

جستجو، ایماں، تن آسانی، گناہ

موج سب کچھ ہے، کنارا کچھ نہیں

justojoo, ayman, tan aasani, gunah
mouj sab kuch hai, kinara kuch nahi

بے وفائی بھی تِرا احسان ہے

اس سے بڑھ کر حق ہمارا کچھ نہیں

be wafai bhi tera ahsaan hai
is se barh kar haq hamara kuch nahi

ہم سے دل لے کر یہ ظالم نے کہا

جاؤ، رستہ لو، تمہارا کچھ نہیں

hum se dil le kar yeh zalim ne kaha
jao, rasta lo, tumhara kuch nahi

اِک نگاہِ لطف ہم پر بھی کبھی

عرض ہے اپنی، اجارا کچھ نہیں

ik ngahِ lutaf hum par bhi kabhi
arz hai apni, ajara kuch nahi

سارے عالم میں وہی وہ ہیں نصیرؔ

سب کچھ ان کا ہے، ہمارا کچھ نہیں

saaray aalam mein wohi woh hain Nasserؔ
sab kuch un ka hai, hamara kuch nahi

peer naseer ud din naseer poetry

peer naseer ud din naseer poetry

اٹھے نہ تھے ابھی ہم حالِ دل سنانے کو

زمانہ بیٹھ گیا حاشیے چڑھانے کو

utthay nah thay abhi hum haal-e dil sunanay ko

zamana baith gaya hashiye charhanay ko

 

 

بھری بہار میں پہنچی خزاں مٹانے کو

قدم اٹھائے جو کلیوں نے مسکرانے کو

bhari bahhar mein pohanchi khizaa mitanay ko

qadam uthaye jo kaliyon ne muskurany ko

 

 

جلایا آتشِ گُل نے چمن میں ہر تنکا

بہار پھونک گئی میرے آشیانے کو

jalaya aatish gul ne chaman mein har tinka
bahhar phoonk gayi mere ashiyaney ko

 

 

جمالِ بادہ و ساغر میں ہیں رُموز بہت

مری نگاہ سے دیکھو شراب خانے کو

Jamal baadah o saghar mein hain ramooz bohat
meri nigah se dekho sharaab khanaay ko

 

 

قدم قدم پہ رُلایا ہمیں مقدر نے

ہم اُن کے شہر میں آئے تھے مسکرانے کو

qadam qadam pay rulaya hamein muqaddar ne
hum unn ke shehar mein aaye thay muskurany ko

 

 

نہ جانے اب وہ مجھے کیا جواب دیتے ہیں

سُنا تو دی ہے انہیں داستاں “سُنانے کو”

nah jane ab woh mujhe kya jawab dete hain
suna to di hai inhen dastan” sunanay ko”

 

 

کہو کہ ہم سے رہیں دور، حضرتِ واعظ

بڑے کہیں کے یہ آئے سبق پڑھانے کو

kaho ke hum se rahen daur, hazrat e waiz
barray kahin ke yeh aaye sabaq parhanay ko

 

 

اب ایک جشنِ قیامت ہی اور باقی ہے

اداؤں سے تو وہ بہلا چکے زمانے کو

ab aik jashne qayamat hi aur baqi hai
aadaon se to woh behla chuke zamane ko

 

 

شب فراق نہ تم آ سکے نہ موت آئی

غموں نے گھیر لیا تھا غریب خانے کو

shab faraaq nah tum aa sakay nah mout aayi
gamoon ne ghair liya tha ghareeb khanaay ko

 

 

نصیر! جن سے توقع تھی ساتھ دینے کی

تُلے ہیں مجھ پہ وہی انگلیاں اُٹھانے کو

naseer! jin se tawaqqa thi sath dainay ki
taley hain mujh pay wohi ungelian uthanay ko

 

 

پیر نصیر الدین نصیر صآحب

پیر نصیرالدین نصیر صاحب ایک عالم اور پنجاب کے مشہور علماء میں سے تھے۔ آپ گوڑرا شریف میں پیدا ہوئے تھے اور وہاں تدفین بھی وئی ہیں۔ پیر صاحب ایک اعلی گدہ نشین ہونے کے ساتھ ساتھ ایک بہترین شاعر اور عالم بھی تھے جسکا اندازہ آپ اشعار پڑھ کر لگا سکتے ہیں۔ پیر نصیر صاحب روح کانپنے والی شاعری کو بہت شہرت ملہ ہیں اور اس شہرت کا وجہ اس میں حقانیت اور تجربہ سے ثابت باتو کو پھرنا ہیں۔ لھذا اگر آپ بھی نصیر الدین نصیر صاحب کے اشعار کو پڑھنے کے شوقین ہیں تو بلا ججک نیچھے سکرول کرکے اشعار پڑھ لیجئے۔

,

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *