Qateel Shifai Shayari – Qateel Shifai Ghazals & Poetry in Urdu

Qateel Shifai Shayari – Qateel Shifai Ghazals & Poetry in Urdu

Qateel Shifai was born in Pakistan in 1919 and died in 1971. His real name was Muhammad Aurangzeb. In 1938, he adopted the pen name Qateel Shifai, under which he was known in the world of Urdu poetry. The “killer” was his “nickname” and the “healing” was in honor of his teacher, Hakim Muhammad Yahya Shafa Khanpuri, whom he considered his mentor. So we have mentioned below the poetry of Qateel Shifai, scroll down and read it.

Qateel Shifai

خود کو فریب دو کہ نہ ہو تلخ زندگی

ہر سنگ دل کو جان وفا کہہ لیا کرو

 khud ko fraib do ke nah ho talkh zindagi
har sang dil ko jaan wafa keh liya karo

‏راہوں پہ نظر رکھنا ہونٹوں پہ دعا رکھنا

آجائے کوئی شاید دروازه کھلا رکھنا

Raho pay nazar rakhna honton pay dua rakhna
aajay koi shayad Darwaza  khula rakhna 

——————————————-

صدمہ تو ہے مجھے بھی کہ تجھ سے جدا ہوں میں

لیکن یہ سوچتا ہوں کہ اب تیرا کیا ہوں میں

sadma to hai mujhe bhi ke tujh se judda hon mein
lekin yeh sochta hon ke ab tera kya hon mein

 

بکھرا پڑا ہے تیرے ہی گھر میں ترا وجود

بے کار محفلوں میں تجھے ڈھونڈتا ہوں میں

bikhra para hai tairay hi ghar mein tra wujood
be car mehafilon mein tujhe dhoondata hon mein

 

میں خودکشی کے جرم کا کرتا ہوں اعتراف

اپنے بدن کی قبر میں کب سے گڑا ہوں میں

mein khudkushi ke jurm ka karta hon aitraaf
–apne badan ki qabar mein kab se gara hon mein

 

کس کس کا نام لاؤں زباں پر کہ تیرے ساتھ

ہر روز ایک شخص نیا دیکھتا ہوں میں

kis kis ka naam lau zuba par ke tairay sath
har roz 1 shakhs naya daikhta hon mein

 

کیا جانے کس ادا سے لیا تو نے میرا نام

دنیا سمجھ رہی ہے کہ سچ مچ ترا ہوں میں

kya jane kis ada se liya to ne mera naam
duniya samajh rahi hai ke sach mach tra hon mein

 

پہنچا جو تیرے در پہ تو محسوس یہ ہوا

لمبی سی ایک قطار میں جیسے کھڑا ہوں میں

pouncha jo tairay dar pay to mehsoos yeh sun-hwa
lambi si aik qitaar mein jaisay khara hon mein

 

لے میرے تجربوں سے سبق اے مرے رقیب

دو چار سال عمر میں تجھ سے بڑا ہوں میں

le mere tajarbon se sabaq ae marey raqeeb
do chaar saal Umar mein tujh se bara hon mein

 

جاگا ہوا ضمیر وہ آئینہ ہے قتیلؔ

سونے سے پہلے روز جسے دیکھتا ہوں میں

jaaga sun-hwa zameer woh aaina hai qateelؔ
sonay se pehlay roz jisay daikhta hon mein

 

——————–Qateel Shifai Shayari————————

 

یارو کہاں تک اور محبت نبھاؤں میں

دو مجھ کو بد دعا کہ اسے بھول جاؤں میں

yaaro kahan tak aur mohabbat nibhaun mein
do mujh ko bad dua ke usay bhool jaoon mein

 

دل تو جلا کیا ہے وہ شعلہ سا آدمی

اب کس کو چھو کے ہاتھ بھی اپنا جلاؤں میں

dil to jala kya hai woh shola sa aadmi
ab kis ko chhoo ke haath bhi apna jalau mein

 

سنتا ہوں اب کسی سے وفا کر رہا ہے وہ

اے زندگی خوشی سے کہیں مر نہ جاؤں میں

santa hon ab kisi se wafa kar raha hai woh
ae zindagi khushi se kahin mar nah jaoon mein

 

اک شب بھی وصل کی نہ مرا ساتھ دے سکی

عہد فراق آ کہ تجھے آزماؤں میں

ik shab bhi wasal ki nah mra sath day saki
ehad faraaq aa ke tujhe aazmaon mein

 

بدنام میرے قتل سے تنہا تو ہی نہ ہو

لا اپنی مہر بھی سر محضر لگاؤں میں

badnaam mere qatal se tanha to hi nah ho
laa apni mohar bhi sir Mahzar lagaun mein

 

اترا ہے بام سے کوئی الہام کی طرح

جی چاہتا ہے ساری زمیں کو سجاؤں میں

Itra hai baam se koi ilham ki terhan
jee chahta hai saari zamee ko sajaun mein

 

اس جیسا نام رکھ کے اگر آئے موت بھی

ہنس کر اسے قتیلؔ گلے سے لگاؤں میں

is jaisa naam rakh ke agar aaye mout bhi
hans kar usay قتیلؔ gilaay se lagaun mein

———————————–Qateel Shifai Ghazal———————————–

جب تصور میرا چُپکے سے تجھے چھُو آئے

اپنی ہر سانس سے مجھ کو تیری خوشبو آئے

jab tasawwur mera chupkay se tujhe chhoo aaye
apni har saans se mujh ko teri khushbu aaye

مشغلہ اب ہے میرا چاند کو تکتے رہنا

رات بھر چین نہ مجھ کو کسی پہلو آئے

mashgala ab hai mera chaand ko taktey rehna
raat bhar chain nah mujh ko kisi pehlu aaye

پیار نے ہم میں کوئی فرق نہ چھوڑا باقی

جھیل میں عکس تو میرا ہو، نظر تُو آئے

pyar ne hum mein koi farq nah chorra baqi
jheel mein aks to mera ho, nazar too aaye

جب کبھی گردشِ دوراں نے ستایا مجھ کو

میری جانب تیرے پھیلے ہوئے بازو آئے

jab kabhi gardish-e dauraa ne sataya mujh ko
meri janib tairay phailay hue baazu aaye

جب بھی سوچا کہ شبِ ہجر نہ ہو گی روشن

مجھ کو سمجھانے تیری یاد کے جگنو آئے

jab bhi socha ke shab_e_ hijar nah ho gi roshan
mujh ko samjhane teri yaad ke jugno aaye

کتنا حساس میری آس کا سنّاٹا ہے

کہ خموشی بھی جہاں باندھ کے گھنگرو آئے

kitna hassas meri aas ka snnata hai
ke khmoshi bhi jahan bandh ke گھنگرو aaye

مجھ سے ملنے کو سرِشام کوئی سایہ سا

تیرے آنگن سے چلے اور لبِ جو آئے

mujh se milnay ko srsham koi saya sa
tairay aangan se chalay aur lbِ jo aaye

اُس کے لہجے کا اثر تو ہے بڑی بات قتیلؔ

وہ تو آنکھوں سے بھی کرتا ہوا جادو آئے

uss ke lehjey ka assar to hai barri baat قتیلؔ
woh to aankhon se bhi karta sun-hwa jadu aaye

, , ,

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *